25 May, 2024


ماہنامہ اشرفیہ


Book: The Monthly Ashrafia August 2023 Download:Click Here Views: 6601 Downloads: 724

(19)-قاضی محمد اسماعیل مقبولی کا وصال

وفیات

امام احمد رضامومنٹ، بنگلور

    الحاج قاضی محمد اسمٰعیل مقبولی وہ نام ہے جو ہمیشہ ہانگل شریف ، کرناٹک کے علاقہ حضرت پیر سیدمقبول احمد شاہ قادری (کشمیری اعلیٰ حضرت) کے نام کے ساتھ جڑا ہوا ہے ،کشمیری اعلیٰ حضرت کے اعلیٰ ترین شاگردوں میں سے ایک ہیں،جنہوں نے اپنی پوری زندگی پیغام اور سنی عقائد کو دنیاکے گوشہ گوشہ تک پہنچایا۔ جب کوئی شخص تصور کرتا ہے کہ اس کے سر پر ترکی ٹوپی، ہاتھ میں چھتری، ہمیشہ شیروانی کا لباس اور داڑھی ہے۔ اگرچہ انہوں نے کسی اسلامی یونیورسٹی سے گریجویشن نہیں کیا، لیکن وہ اسلامی شریعت کے میدان میں ایک اعلیٰ ا سکالر بن کر ابھرے۔وہ اسلامی تعلیم کی واکنگ لائبریری ہونے کی وجہ سے مشہور ہیں۔ اپنی علمی معرفت کی وجہ سے انہوں نے ریاست اور ریاست سے باہر کئی کانفرنسوں اور مباحثوں میں حصہ لیا۔وہ منطق کے میدان میں بڑی مہارت رکھتے تھے اور پیچیدہ مضامین میں مہارت کا مظاہرہ کرنے پر دنیا کے بہت سے علماء نے ان کی تعریف کی ہے۔تحفۃ المسالک مقبولی،کشمیری اعلیٰ حضرت کے پیغامات کو فروغ دینے کا ایک فورم رہا۔

انہوں نے سری لنکا کے کولمبو میں مسجدمقبول، جنوبی افریقہ کے کیپ ٹاؤن میں خانقاہ مقبولی، دبئی میں اپنے  استادکے نام پر بزم المقبول قائم کر کے کشمیری اعلیٰ حضرت کا نام دنیا میں روشن کرنے کی بہت کوششیں کیں۔ مولانااپنے استاد کشمیری اعلیٰ حضرت پر سوانحٔ مقبول، کرامت مقبول، ارشادات مقبول وغیرہ تصنیف کیں، جن میں کشمیری اعلیٰ حضرت کی زندگی اور پیغامات کے بارے میں تفصیلی معلومات فراہم کی گئیں۔وہ ہمیشہ ایک موبائل شخصیت کے مالک تھے، جب بس اور ٹرین کی سہولت نہیں تھی تو پیدل چلتے تھے، بہت سی مشکلات کا سامنا کرتے تھے اور ایک اسلامی سنی انفارمیشن سینٹر کے طور پر کام کرتے تھے۔

اسلامی شرعی احکام کے مطابق عرس پروگرام کے انعقاد میں کشمیری اعلیٰ حضرت کا کردار بہت بڑا ہے،جنوبی ہند کی مرکزی صوفی کانفرنس کی حیثیت سے اس کی بنیاد رکھی ۔حضرت کے  چار بیٹے اور ایک بیٹی ہے۔سبھی  مذہبی تعلیم کے ماہر ہیں اور لیکچرار کے طور پر خدمات انجام دے رہے ہیں۔

الحاج قاضی محمد اسماعیل مقبولی طویل علالت کے بعد بتاریخ 12محرم الحرم ۱۴۴۵ھ 30ْْجولائی 2023بروز اتوار رات تقریباً ساڑھے نو بجے شاگر دکشمیری ِ اعلیٰ حضرت کا وصال پر ملال ہوا ۔انا للہ وانا الیہ رجعون ۔حضرت کے وصال سے کشمیری اعلیٰ حضرت، ہانگل کی شاگردی کی آخری کڑی منقطع ہوگئی اور سنی عالم اسلام کو بہت بڑا نقصان پہنچا۔

ادارہ امام احمد رضا مومنٹ، بنگلوراللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں دعا گو ہے کہ اللہ تعالیٰ اپنے حبیب ﷺ کے صدقے حضرت کی بے حساب مغفرت و بلند یٔ درجات عطا فر مائے اور تمام پسماندگان کو صبر جمیل عطا کرے

Copyright @ 2017. Al Jamiatul Ashrafia

All rights reserved