14 November, 2018


دارالاِفتاء


Assalam wa alaikum, Masla : Zameen(Ghar) ka baare mei Saail ka Name : Qamruddin Ismail Shaikh walid ka name : Ismail Husain shaikh walida ka name : Roshan B Total bhai aur bahne 1)(Mehmooda (Bahen) 2)(Najmunnisa(Bahen) 3)(Mehrunnisa(bahen) 4)(Shabera(bahen) 5)(Nooruddin(chhota Bhai) Meri saari bahno aur bhai ki shadi ho chuki hai aur sabhi bahne aur bhai ba hayat hai sirf shabera bahen ka inteqal ho chuka hai unke shohar aur bacche ba hayat hai Asal masla :Hamara ek ghar hai jo kisi wajah se mere walid ne meri walida ka name kar rakha tha jisme mere waliden,mere chhote bhai ki family aur meri family sath me raha karte the. meri walida ke inteqal k baad bahno k israr par ye ghar mere chhote bhai k name kardiya gaya jisme mere walid ki dakhal andazi nahi thi q k mere walid ko paralise ki bimari thi lekin walid ko pata tha k ghar mere chhote bhai k name ho chuka hai.jisme unko koi pareshani nahi thi.Ye ghar chhote bhai k name hone k baad bhi mai aur mere chhote bhai ki family sath mei hi rehti thi. Ek aur ghar mere waliden ne le rakha tha,ye ghar mere waliden ki hayati mei mere name ho chuka tha lekin is ghar mei meri bahen raha karti thi q k bahen ne kisi wajah se apna khud ka ghar bech diya tha is wajah se mai ne bahen ko is ghar mei rahne ki ijazat di thi.lekin is ghar par mera taaba nahi tha matlab mai kabhi bhi is ghar mei rahne k liye nahi gaya tha,mere waliden k inteqal k baad bhi mai kabhi bhi is ghar par apni family k sath rehne nahi gaya tha. abhi bhi meri bahen apni family k sath is ghar mei rehti hai. Ab masla ye hai k mere waliden ka inteqal ho chuka hai aur Ab meri saare bahne hum dono bhaiyo se in dono ghar ka haq maang rahi hai,to ab masla bataye k kya bahno ka haq in dono ghar mei banta hai aur agar banta hai to kisko kitna hissa milega. JAZAK ALLAH

فتاویٰ # 56

اسلام علیکم حضرت اگر کوئی شخص شادی کیا ایک سال بعد بیوی کا انتقال ہوگیا پھر اس نے دوسری شادی کی- پہلی سے ایک لڑکا اور اور دوسری بیوی سے چار لڑکے اور تین لڑکیاں ہیں تو انکے دھن دولت کھیتی باڑی پراپرٹی کا بٹوارہ شریعت کے حساب سے کیسے ہونا چاہیئے - اگر پہلی بیوی کے کچھ زیورات بھی رہے ہوں تو اس کا مالکانہ حق کس کو ملنا چاہیے. اور بچیوں کی شادی گھر کے کمبائن اخراجات سے ہوچکا ہو- ایسے میں ایک باپ کو پوری جائیداد کو کیسے تقسیم کرنی چاہیے؟

فتاویٰ # 546

جناب مفتی ساھب۔ السلام علیکم ورحمتوللاہی وبرکاتوہو ۔ *وراثت کے معاملے مے رہنماء فرماے۔* مری والدہ مریم کا انتقال 1984 میں ہوا تھا ۔ ۳ بیٹے۔ ۱۔ محمد حنیف ۲۔محمد ایوب ۳۔ محمد عرفان ۔ ۵ بیٹیاں ۱۔ زبیدہ ۲۔ رضیہ ۳۔ جمیلہ ۴۔ نجمہ ۵۔حسینہ شوہر قاسم بھائی *وقتے انتقال جاءداد* ۔1۔ اک مکان ،کیمت 1770000، ے مکان مے مھمدءرفان رہتے ہے ،انکا کبضا ہے۔ ۔2۔ اک لاکھ روپیے کی کیش ،ذیور وگیرہ ہر اک جاءداد کی تقسیم کیسے ہوگی؟ ہر اک واریس کو کیتنا ھیسسا میلےگا ؟ ------------------------------------   1996 میں قاسم بھائی نے دوسری شادی رقیہ بیبی سے کی۔ ان سے کوئی اولاد نہیں۔ 2010 میں وآلید قاسم بھائی کا انتقال ہوا۔ وقت انتقال تینوں بیٹے جدا جودا رہتے تہے اور پانچوں بیٹیاں کی شادی ہو چوکی تھی، اپنے گھر سسورال مے رہتی تھی۔ *وقت انتقال جائداد۔* 1۔اک لاکھ کیش (زیور وغیرہ ) 2۔ ۔ ویرمگام میں اک مکان ۔ کیمت 2200000، اسمے محمدحنیف رہتے ہے ،انکا کبضا ے ۔ 3 ۔ احمدآباد میں ایک دکان،کیمت 1480000 جو محمدایوب سمھالتے ہے۔ انکے نام پر ہے اور ان ہی کا قبضہ ہے۔ یہ دکان والدنےخریدی تہی، خریدنے میں والد، والدہ روقیہ بیبی، اور مھمدایوب کے پیسے لگے تھے۔ 4 ۔ اھمدابادمے ایک مکان ،کیمت 1500000، جو والیدہ رقیہ بیبی کے نام پر ہے اور انکا قبضہ ہے۔ یہ مکان والد نے حیات ہی میں انکے نام کھریدا تھا۔ 5۔ ویرمگام مے اناج کرانا کی دکان۔ جو ٹرسٹ کی ہے والد کرائےدار تھے۔ ۔ انتقال کے وقت دکان کے کاروبار میں دولاکھ روپیےکا قرض دینا باکی تھا۔ ۔ یہ دکان کا کاروبار والید قاسم بھای ھیاتمے کھود سمھالتےتھے اور محمدحنیف کا بیٹا محمدبرہان(پوتا) اپنے داداکی مددمے ساتھ دیتا تھا۔ کوچھ تنکھواہ نھی لیتا تھا۔ ۔ بعدے انتقال کاروبار محمدبرہان سمھالتا ہے اور اسی کا قبضہ ہے۔ نوٹ:- قاسمبہای کے انتقال ک کوچھ دنو باد تمام واریثومےسے، تین بھای اور چار بہن( 1 بھن اور وآلیدہ روکییابیبی کی گیرموذدگی مے) اناز کیرانا کی دوکان مھمدبورھان (پوتا) سمھالتا ہے اسکے بارے مشورہ ہوا تھا کے کاروبار مھمدبورھان سمھالےگا ، مونافےسے انھے ہر ماہ روپے 4000 ہزار تنکھواہ لینی ہوگی، بکییا مونافا وراثت مانا ذاےگا۔ ے مشورہ مھمدبرھان کی گیر موجودگی میں ھوآ تھا، اور مشورہ کی شرت پر مھمدبورھان کاروبار سمھالنے کے لیے راضی ھے یا نھی ے باتکا انسے کوی کھولاثا نھی ھوا تھا۔ ہر اک جاءداد کی تقسیم کیسے ہوگی؟ ہر اک واریس کو کیتنا ھیسسا میلےگا ؟ سوال:- مشورہ کے امل کے بارےمیں مھمدبورھان کے لیے کیا ھوکم ہے؟ شرعی رھنومای فرماے۔ وسسلام۔ آپکا ناچیز مھمدحنیف Ye sawal pahle bheja tha, sawal No. 558, jisme likhne me kuchh galti thi, use thik karke dobara bhej raha hu, Baraye karam sawal No. 558 ki bajaye ye sawal ka jawab inayat farmaye. JAZAKALLHUKAYRA.

فتاویٰ # 560

Copyright @ 2017. Al Jamiatul Ashrafia

All rights reserved